Sunday, 17 May 2020

ظفر شیر شاہ آبادی ۔۔۔۔۔۔ سیمانچلی شاعری کا تازہ چہرہ

تحریر: احسان قاسمی، پورنیہ

بسلسلہ ' سیمانچل ادب کا گہوارہ


ZAFAR SHERSHAHBADI
POET
DOB - 12 MARCH 1986
Vice - Principal ,
Alhikmah National School
Fatahpur, Harishchandra pur
Dist : Malda ( Bengal )
P/Add : Ward No - 6 , Jagwati
Kumaripur ( Manihari )
Dist : Katihar
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اصل نام: مسعود ظفر
قلمی نام: ظفؔر شیر شاہ آبادی
تخلص: ظفر
والد کا نام: علاء الدین ندوی (جھبوٹولہ، امدآباد، کٹیہار، بہار)
والدہ کا نام: نور النساء (بشن پور، چانچول ۔ مالدہ، بنگال)
شریکِ حیات : ام حبیبہ ( بشن پور ، چانچول ۔ بنگال )
اثمارِ حیات : دو بیٹیاں : فرح ، چار سال اور بشریٰ ، ڈیڑھ سال ۔
تاریخ پیدائش: 12 مارچ 1986ء
جائے پیدائش: مالدہ، مغربی بنگال
آبائی وطن:
بچپن: حاجی جھبوٹولہ، امدآباد، کٹیہار۔
نو عمری سے تا حال: وارڈ نمبر 6، جگواٹی، کماری پور، منیہاری، کٹیہار۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تعلیمی تفصیلات
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابتدائی تعلیم: مدرسہ فلاح المسلمین، تیندوا، رائے بریلی، یوپی۔
ثانوی تعلیم: محمدیہ اردو ہائی اسکول، منصورہ، مالیگاؤں، ناسک، مہاراشٹر۔ 2005
عالمیت: جامعہ محمدیہ، منصورہ، مالیگاؤں، ناسک، مہاراشٹر۔ 2005
فضیلت: جامعہ اسلامیہ، نورباغ، ممبرا، ممبئی، مہارشٹر۔ 2008
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اساتذہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اردو : ڈاکٹر افضال علیگ ۔ جلگاؤں ( مہاراشٹر )
انصاری عارف حسین ۔ مالیگاؤں ( مہاراشٹر )
عربی : علاءالدین ندوی ( والد محترم )
شیخ شہاب الاسلام محمدی
اساتذہء فن : جناب عطا رامپوری ، سراج عالم زخمی ، شوکت عزیز
ملازمت میں آنے کی تاریخ: 2008
❶ استاد: جامعہ اسلامیہ، نورباغ، ممبرا، ممبئی، مہارشٹر۔ 2008
❷ عربی لیکچرار: سلفی عربک کالج، میپایور، کالی کٹ، کیرالا۔ 2009۔
❸ امامت: مسجد عبد اللہ آل ثانی، دوحہ، قطر۔ 2009 تا 2016
❹ وائس پرنسپل: الحکمة نیشنل اسکول، فتح پور، ہریشچندرپور، مالدہ، مغربی بنگال۔ 2018
اصناف سخن جن میں طبع آزمائی کی: غزل، حمد، نعت، نظم
شاعری کی ابتدا: 2004
اشاعت : مجلہ المصباح، کویتگیا
015، پیغام مادروطن، دہلی، 2016
غزلوں / نظموں کی تعداد: تقریبا 100
شعری مجموعہ : زیر ترتیب
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ظفر شیر شاہ آبادی نے شاعری کی ابتدا ۲۰۰۴ ء سے کی ۔ کم عرصہ میں ہی شعر گوئی کی اچھی صلاحیت ان کے اندر پیدا ہو چکی ہے جو اس بات کی غماز ہے کہ ظفر نے فنِ شعر گوئی کو سنجیدگی سے لیا ہے اور اس پر لگاتار محنت بھی کر رہے ہیں ۔
ظفر کی شاعری میں یوں تو روایتی محبوب بھی ہے ، لب و رخسار کی باتیں بھی ہیں اور شکوہ شکایتیں بھی لیکن ان تمام چیزوں کے درمیان عصرِ حاضر کے پیچیدہ مسائل ، ملکی حالات ، ناانصافی ، منافقت ، بے چہرگی ، شکست و ریخت اور ایک انجان سے پروان چڑھتے خوف کی پرچھائیاں بھی در و دیوار پر لرزاں نظر آتی ہیں ۔ چند اشعار پیش کرتا ہوں ۔

مرے اجداد کا فدیہ ہے یہ ہندوستاں میرا
مجھی سے لے رہا جزیہ ہے یہ ہندوستاں میرا
۔
گو اس کے ہر اک وار کا انداز جدا ہے
ہر وار پہ یکساں ہی مگر زخم ہوا ہے
۔
جرم میرا نکلے گا ، یہ یقین ہے مجھ کو
آپ ہی تو منصف ہیں ، آپ کی عدالت ہے
۔
سنا ہے آپ بھی اب خوف کے عالم میں جیتے ہیں
ہماری آپ کی آزادیاں بھی ایک جیسی ہیں
۔
ہر اک شئے قیمتی ہے اس جہاں میں
مگر پھر خون کیوں سستا بہت ہے ؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
منتخب کلام
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
❶ مناجات
تو خالقِ حیات ہے بَلند تیری ذات ہے
ترے وجود پر گواہ ساری کائنات ہے
میں حمد کیا بیاں کروں گناہ گار ہوں بہت
رؤوف تو رحیم تو، غفور تو حلیم تو
ہے صاحبِ جلال تو، حکیم تو علیم تو
سعادتوں کا نور دے سیاہ کار ہوں بہت
تری قضا پہ منحصر امورِ کائنات ہیں
ہماری کیا بساط ہے کہ ہم تو بے ثبات ہیں
تو ہی عزیز کر مجھے ذلیل و خوار ہوں بہت
تری عطا ہے زندگی تجھی سے کتنا دور ہوں
ملی ہیں تیری نعمتیں تو میں نشے سے چور ہوں
گناہ میرے بخش دے میں اشک بار ہوں بہت
کتابِ زندگی مری گناہ کی کتاب ہے
جو نیکی ظاہراً بهی ہے وہ خواب ہے سراب ہے
تو میرے دل کو صاف کر میں داغ دار ہوں بہت
مری ہے ایک التجا الہی تو قبول کر
ظفر کو باغِ خلد میں مرافقِ رسول کر
قبولیت کا شرف دے کہ خاک سار ہوں بہت
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
❷ نعت نبی ﷺ
داورِ روزِ محشر ہمارے نبی
ساقئ جامِ کوثر ہمارے نبی
ان کی گفتار حق، ان کا کردار حق
بالیقیں حق کا مظہر ہمارے نبی
وہ ہیں بدر الدجیٰ، وہ ہیں شمس الضحیٰ
ماہ و پروین و اختر ہمارے نبی
ان کا ہر انگ خوشبو سے دھلتا ہوا
تھے سراپا معطر ہمارے نبی
بے کسوں، بے کلوں کا سہارا تھے وہ
شافیِ قلبِ مضطر ہمارے نبی
ہم کو دولت ملی ان سے اسلام کی
دین و ایماں کا محور ہمارے نبی
قاطعِ جہل وہ، ماحیِ شرک وہ
جن و انساں کا رہ بر ہمارے نبی
دشمنوں کو گلے سے لگایا کیا
رحمتوں کا پیمبر ہمارے نبی
ان کا ہر لمس برکت کا مظہر ہوا
خیر و برکت کا مصدر ہمارے نبی
اے ظفر وہ معلم ہیں اخلاق کے
عمدہ سیرت کا پیکر ہمارے نبی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
❸ حمد
فضل تو نے کیا دے کے راہ ِ ھُدیٰ
رشک اس پر کرے ہر غنی و گَدا
حمد میں ہیں مگن اہل ارض و سما
نعمتوں پر تری ہر کوئی ہے فدا
وَ ا شکُرُوا لِي تو تُو نے کہا ہے مگر
شُکر کیا میں ترا کر سکوں گا ادا
یوں ظؔفر کو دیا تو نے فرح و سرور
ناز کم ہے جو کرتا رہے وہ سدا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
❹ مناجات
ختمِ رسل کی شرعِ متیں چاہئے مجھے
فرقوں کی مغز ماری نہیں چاہئے مجھے
مجھ کو سمجھ سکے وہ قریں چاہئے مجھے
سیرت سے ہم سفر بھی حسیں چاہئے مجھے
یا رب مجھے بھی آہنی جذبہ نواز دے
خود سے بھی لڑ سکوں وہ یقیں چاہئے مجھے
دنیا کی جستجو میں تجھے بھول چکا میں
سجدوں میں ہو مگن وہ جبیں چاہئے مجھے
شہروں کے شور و غل سے بہت اوب چکا ہوں
گاؤں کی پر سکون زمیں چاہئے مجھے
مظلومیت کا میں ہوں علَم نام ہے حلَب
انصاف کو عمر سا امیں چاہئے مجھے
دنیا میں نعمتیں تو بہت تو نے دیں مجھے
عُقبیٰ میں تیری خلدِ بریں چاہیے مجھے
تیری نوازشوں کا طلب گار ہے ظفؔر
احسان اب کسی کا نہیں چاہئے مجھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
❺ نعت
جو فدا یانِ راہِ ھدیٰ ہو گئے
سارے حق ان کے مانو ادا ہوگئے
ہو کے امی بھی وہ رہ نما ہو گئے
کشتیٔ علم کے نا خدا ہو گئے
جو تھے دشمن کبھی میرے سردار کے
حسنِ اخلاق پر وہ فدا ہو گئے
جب سے رستہ ملا مصطفیٰ کا مجھے
کفر کے سارے رستے جدا ہو گئے
اس کے بد بخت ہاتھوں کی گستاخیاں
تا قیامت وہ تبَّت یَدا ہو گئے
شاہِ بطحا کی ہے تربیت یہ ظفؔر
ایک ہی صف میں شاہ و گدا ہو گئے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
❻ نعت نبی ﷺ
دنیا میں محمد سا موقر نہیں آیا
کوئی بھی یہاں آپ سے برتر نہیں آیا
ہر دور ہر اک قوم میں آئے تھے پیمبر
جو رہبر ِعالم ہو وہ رہبر نہیں آیا
تاریخ کے اوراق پلٹ کر کبھی دیکھو
یاں آپ سا رحمت کا پیمبر نہیں آیا
طائف کے مکینوں نے ہراساں جو کیا تھا
جُز حرفِ دعا کچھ بھی زباں پر نہیں آیا
فرعون کے اخلاف ہر اک دور میں آئے
بولہب و ابوجہل سا کم تر نہیں آیا
اوصاف حمیدہ کے ہیں اغیار بھی قائل
کوئی بھی بشر آپ سے بہتر نہیں آیا
ہے نعت کا لکھنا بھی ظؔفر ایک سعادت
مسعود کو یہ فن ہی میسر نہیں آیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
❼ نعت نبی ﷺ
بنی نوعِ انساں کا سر دار ہے
وہ مونس غریبوں کا غم خوار ہے
وہ رحمت سراپا بہ ہر انس و جاں
عظیم ان کا اخلاق و کردار ہے
لبوں سے جھڑے موتیوں کی لڑی
وہ شیرین لب نرم گفتار ہے
حسیں خُلق سے سب مسخر ہوئے
بہت خوب صورت یہ تلوار ہے
ضلالت کے طوفاں میں میرا نبی
ہدایت کی کشتی کا پتوار ہے
اگر شرک و بدعت سے خالی نہیں
تو لا ریب ہر کار بے کار ہے
رفاقت نصیب ان کی جنت میں ہو
نگاہوں کو بس شوقِ دیدار ہے
ظفؔر کے قلم کو دے رعنائیاں
نہ شاعر نہ کوئی قلم کار ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
❽ ماں
دل کی تکلیف ساری مٹا جاؤ ماں
ایک پل کے لئے مسکرا جاؤ ماں
مدتوں سے ہیں بے خواب آنکھیں مری
سر کو سہلا کے لوری سنا جاؤ ماں
کتنی گستاخیاں مجھ سے سرزد ہوئیں
مامتا سے انہیں تم بھلا جاؤ ماں
پاس آؤ کہ قدموں کو میں چوم لوں
ایک جنت مجھے تم دلا جاؤ ماں
آرزو ہے کہ رب مجھ سے راضی رہے
مجھ پہ اپنی رضا تم جتا جاؤ ماں
تم سے تکرار کرکے پشیمان ہوں
ہار کر پھر مجھے تم جتا جاؤ ماں
غم کے صحرا میں مدت سے بھٹکا ہوں میں
اب تو خوشیوں کا رستہ دکھا جاؤ ماں
تم دعا دو کہ روشن ستارہ بنوں
سرخ رو یوں ظفر کو بنا جاؤ ماں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
❾ غزل
آپ سے بچھڑنا اک کرب ہے اذیت ہے
ہاتھ تو ملا لیجے کون سی قباحت ہے
جرم میرا نکلے گا، یہ یقین ہے مجھ کو
آپ ہی تو منصف ہیں آپ کی عدالت ہے
تحفتا" مجھے اس نے زخم ایسے بھیجے ہیں
داغ ہے نہ گھاؤ ہے واہ کیا نفاست ہے
زخم بھی زمانے میں کون مفت دیتا ہے
نیکیوں کے بدلے میں یہ ستم غنیمت ہے
آپ کہہ رہے ہیں کیوں اب تلک میں زندہ ہوں
میری زندگی تو بس موت سے عبارت ہے
آنسوؤں کو خوں کرکے پی رہا ہوں مدت سے
زندگی کی ہر ساعت مانئے قیامت ہے
آپ کی خوشی پر اب میرا حق نہیں کچھ بھی
تب عجب محبت تھی اب عجب عداوت ہے
شعر کی زباں میں اب زخم لکھ رہا ہوں میں
نہ کوئی کہانی ہے نہ کوئی حکایت ہے
خون میں ترے اک دن زہر اپنا بھر دیں گے
آستیں میں سانپوں کو پالنا حماقت ہے
ہے بری یہ لت میری سچ کو سچ ہی کہتا ہوں
ہاں ظفر بھی باغی ہے سچ اگر بغاوت ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
❿ غزل
غمزۂ چشم گفتگو ہے کیا؟
تری چاہت ہی جستجو ہے کیا؟
اور بھی ہم سفر ملیں گے مجھے
مری دنیا میں صرف تو ہے کیا؟
اس کی آمد سے میں معطر ہوں
یہ مرا یار مشک بو ہے کیا؟
مرا رب کاش یہ کہے مجھ سے
تو بتا تیری آرزو ہے کیا؟
میں تو تیری رضا کا طالب ہوں
تو نہ خوش ہو تو جستجو ہے کیا؟
مجھے بدنام کر رہا ہے جو
اس کی عزت اور آبرو ہے کیا؟
مری خوشیوں سے کیوں فسردہ ہے
یہ بتا تو مرا عدو ہے کیا؟
کیوں ظؔفر آج ہے بہت فرحاں
آج محبوب رو بہ رو ہے کیا؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
⑪ غزل
سینے میں مرے کوئی بھی خنجر نہیں آیا
مرنے کا ابھی وقت مقرر نہیں آیا
کچھ تیر مرے اپنوں کے آئے تھے مری سمت
صد شکر نشانے پہ مرا سر نہیں آیا
محفل میں تو آیا تھا مگر خود میں مگن تھا
یوں مجھ کو لگا جیسے وہ آ کر نہیں آیا
میں نے ہی سجائی تھی بڑے شوق سے محفل
میری ہی طرف ایک بھی ساغر نہیں آیا
پلکوں پہ سجائے تھے بہت خواب سہانے
تعبیر میں تو کچھ بھی میسر نہیں آیا
سر کٹ گیا لیکن یہ خوشی دل میں ہے میرے
ایمان سلامت ہے گنوا کر نہیں آیا
اعمال میں کچھ اپنے ہی لگتا ہے کمی ہے
کیوں آج ابابیل سا لشکر نہیں آیا؟
فرصت ہے ابھی نیکیاں چاہو تو کما لو
دنیا سے گیا جو بھی پلٹ کر نہیں آیا
غربت میں ظؔفر عید بھی ماتم سی لگے ہے
خوشیوں کا کوئی پل بھی میسر نہیں آیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
⑫ غزل
اگر چہ راستا ٹیڑھا بہت ہے
"محبت کا سفر اچھا بہت ہے"
مصائب سے بھرا پر پیچ رستہ
نشانِ رہ گزر کچا بہت ہے
اگر چہ آندھیاں ہیں زور آور
ہمارا عزم بھی پختہ بہت ہے
بلا کا حسن ہے اس مہ جبیں میں
گلی کوچے میں یہ چرچا بہت ہے
ہر اک شے قیمتی ہے اس جہاں میں
مگر پھر خون کیوں سستا بہت ہے
تڑپتا چھوڑ کر اک شخص مجھ کو
جناں کے باغ میں ہنستا بہت ہے
تجھے ہر موڑ پر مفقود پایا
ترا ہم راز یہ تنہا بہت ہے
کرے ہے حق بیانی کیوں ہمیشہ
اسی عادت سے تو رسوا بہت ہے
وہ دن کچھ اور تھے جب نام ور تھے
ہمارا حال اب خستہ بہت ہے
ذراسی بات پہ رونے لگو ہو
تمہارا دل ظفرؔ! چھوٹا بہت ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
⑬ غزل
مرے اجداد کا فدیہ ہے یہ ہندوستاں میرا
مجھی سے لے رہا جزیہ ہے یہ ہندوستاں میرا
ذرا تاریخ پڑھنے کی کبھی زحمت بھی کر لینا
مرے ہی خون کا ثمرہ ہے یہ ہندوستاں میرا
لہو دوں گا میں اپنا جب ضرورت آن پہنچے گی
لُٹا دوں جان بھی، جذبہ ہے یہ ہندوستاں میرا
ذرا الزام لگ جائے گر فتا ر ی یقینی ہے
مگر مجرم ہوئے شستہ، ہے یہ ہندوستاں میرا
خلل کوئی بھی مت ڈالے مرے ملکی مسائل میں
کہ اٹھے پھر کوئی فتنہ ہے یہ ہندوستاں میرا
یہ اک سونے کی چڑیا تھی یہ محور تھا زمانے کا
ہوئے حالات اب خستہ، ہے یہ ہندوستاں میرا
مرے دامن پہ ہلکا داغ لگ جائے تو آفت ہے
ترے ظلموں سے شرمندہ ہے یہ ہندوستاں میرا
میسر ہوں گے اچھے دن بڑی امید تھی سب کو
مگر یہ تو ہوا جملہ، ہے یہ ہندوستاں میرا
جو قاتل تھا ہزاروں کا ظفؔر اب وہ مسیحا ہے
تماشہ یہ ہوا طرفہ، ہے یہ ہندوستاں میرا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
⑭ غزل
ستاتی ہیں ظالم یہ پروائیاں کیوں
مجھے کاٹ کھاتی ہیں تنہائیاں کیوں
بپا ہوگا پھر کوئی طوفان شاید
وہ لینے لگے ہیں یوں انگڑائیاں کیوں
خیالوں میں خوابوں میں جو بس چکے تھے
اب ان کی ہی چبھتی ہیں پرچھائیاں کیوں
وہ دیکھے مرا ظرف اگر دیکھنا ہے
وہ ناپے ہے زخموں کی گہرائیاں کیوں
یہ آنکھیں تو کچھ اور ہی کہہ رہی ہیں
چھپاتے ہیں مجھ سے وہ سچائیاں کیوں
انہیں آئنہ تو دکھایا نہیں ہے؟
کہ پھیکی پڑیں ساری رعنائیاں کیوں
ظفر اپنے ایمان کی بھی خبر لو
ہر اک موڑ پر اتنی رسوائیاں کیوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
⑮ غزل
گو اس کے ہر اک وار کا انداز جدا ہے
ہر وار پہ یکساں ہی مگر زخم ہوا ہے
اب دشمنوں کی صف میں بھی آگے ہی کھڑا ہے
وہ شخص جو میری ہی نوازش پہ پلا ہے
کس نام سے تجھ کو میں بھلا یاد کروں گا
تجھ سے تو فقط یار مجھے درد ملا ہے
کہتا تھا مجھے وہ کہ بہت بولتا ہوں میں
اب خامشی بھی اس کے لئے ایک سزا ہے
ہم راز مرے چند منافق بھی ہوئے ہیں
ان ہی کے فریبوں نے مجھے زیر کیا ہے
مجھ کو ہے یقیں اس کو ندامت ہی ملے گی
جو طیش میں آکر کے جدا مجھ سے ہوا ہے
زخموں پہ مرے تیری یہ مسکان ہے کیسی
پہلو میں کوئی دل ہے کہ پتھر ہی رکھا ہے
سچ بولنا تو آج ظفؔر جرم ہے گویا
کل تک جو فدا تھا وہی اب مجھ سے خفا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
⑯ ‌
غزل
چمن بھی ایک جیسے، تتلیاں بھی ایک جیسی ہیں
زمینیں صورتِ جنت نشاں بھی ایک جیسی ہیں
ہمارے درد و غم دشواریاں بھی ایک جیسی ہیں
مسیحاؤں میں اب عیاریاں بھی ایک جیسی ہیں
سنا ہے آپ بھی اب خوف کے عالم میں جیتے ہیں
ہماری آپ کی آزادیاں بھی ایک جیسی ہی
جلائی جاتی ہیں دونوں ہی جانب مال کی خاطر
ہماری اور تمھاری بیٹیاں بھی ایک جیسی ہیں
ذرا سی بات پہ تم خون کی ندیاں بہاتے ہو
یہاں ترشول کی شربازیاں بھی ایک جیسی ہیں
زبانیں اور تہذیبیں یہ خور و نوش ہیں یکساں
یہ موسم اور یہ پروائیاں بھی ایک جیسی ہیں
ہوئے ہو کیوں الگ تم جب سبھی ہم ایک جیسے ہیں
ہماری باہمی دل داریاں بھی ایک جیسی ہیں
غبن سے اور رشوت سے یہاں ہم بھی پریشاں ہیں
سیاسی لیڈروں کی چوریاں بھی ایک جیسی ہیں
ظفؔر ان کی بھی آنکھیں جاگتی رہتی ہیں راتوں کو
ہمارے خواب اور کم خوابیاں بھی ایک جیسی ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
⑰ غزل
میں خود میں گم ہوں کہیں آج لا مکاں ہوں میں
مجھے خبر ہی نہیں ہے کہ اب کہاں ہوں میں
خوشی کی جستجو میں تو مجھی سے روٹھا ہے
سکون میں ہوں ترا سن کہ جانِ جاں ہوں میں
میں تم پہ اور بھلا کیسے اعتبار کروں
مری نظر سے گرے ہو کہ بد گماں ہوں میں
مجھے تو ناز ہے اردو کا میں بھی طالب ہوں
کہ درؔد و میؔر کا غالؔب کا ہم زباں ہوں میں
امیرِ شہر کی معصو میت پہ مت جانا
انہی کے ظلم کی اک تازہ داستاں ہوں میں
وہ پوچھتے ہیں مرا مسلک آخرش کیا ہے؟
انہیں کوئی تو کہے ایک مسلماں ہوں میں
گناہ کر کے تری رحمتوں کا طالب ہوں
نہ ہو اگر تری بخشش تو رائیگاں ہوں میں
قدم قدم پہ ہیں در پیش نت نئے طوفاں
بھنور کے بیچ ظفؔر زیرِ امتحاں ہوں میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
⑱ غزل
حسرتوں کی میں اک کتاب لکھوں
چا ہتو ں کا حسین با ب لکھو ں
ترے چہرے کو میں گلاب لکھوں
آ صنم تجھ کو ما ہتا ب لکھوں
زیرِ دند ا ن حرکتِ لب کو
لب لکھوں یا کہ پھر شباب لکھوں
پھر ترے لب سے اک سوال اٹھا
اب قریب آ کہ میں جواب لکھوں
ہے کشش یا ہے نشہ آنکھوں میں
ان کو میں کاسۂ شراب لکھوں
اپنی حالت جو میں لکھوں ہم دم
غم و اندوہ اور عذاب لکھوں
و ہ محبت کو جر م کہتے ہیں
میں ا سے با عثِ ثواب لکھو ں
ایک دن ہم بھی مل ہی جائیں گے
اس کو حسرت لکھوں یا خواب لکھوں
یوں تو کہنے کو اب ظفؔر خوش ہے
اس خوشی کو بھی میں سراب لکھوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
⑲ غزل
محبت آپ سے کرتے بہت ہیں
مگر اظہار سے ڈرتے بہت ہیں
پتہ ہے کیوں ہمی کٹتے بہت ہیں؟
ہمارے باہمی جھگڑے بہت ہیں
منافق سے ہمیں ہے سخت نفرت
سنا ہے آپ کے چہرے بہت ہیں
انہیں کیسے میں اپنا یار کہہ دوں
جو میرے درد پہ ہنستے بہت ہیں
غزل کی شکل میں ہم زخم لکھیں
مریضِ عشق ہیں روتے بہت ہیں
فقط اک تو نہیں ہے اس جہاں میں
کہ ہم پہ اور بھی مرتے بہت ہیں
بہانے لاکھ ہیں گر دل نہ چاہے
وگرنہ وصل کے رستے بہت ہیں
مرے مولیٰ خطائیں بخش دینا
مرے اعمال بھی گندے بہت ہیں
ظفؔر ہر ملک کی حالت یہی ہے
ذرا سی بات پہ دنگے بہت ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0 comments: